خبر اور تجزیہ

جرمن بحریہ کی طرف سے ترکی کے بحری جہاز کی تلاشی اشتعال انگیز ہے

ترک وزارت خارجہ کے مطابق جرمن نیوی کے جنگی فریگیٹ ہیمبرگ نے جزیرہ نما پیلوپونیسَس میں یونان کی بندرگاہ پر ترک تجارتی مال بردار جہاز روزلائن کو روک کر زبردستی تلاشی لی

ترکی کے سرکاری ترجمان کے مطابق جرمن بحریہ کے جنگی فریگیٹ کے بحری فوجیوں نے ترکی کے فیلگ والے لائن ۔ اے نامی بحری جہاز پر زبردستی ہیلی کاپٹر سے اتر کر عملے کو یرغمال بنا کر جہاز کی تلاشی لی۔ نہ صرف جہاز کی تلاشی لی گئی بلکہ جہاز کے عملے کے ساتھ ناروا سلوک بھی کیا گیا۔ ترکی کے مطابق یہ بین الاقوامی قوانین کی سنگین خلاف ورزی ہے ۔ اور ترک حکومت نے واقعہ کیخلاف بھرپور احتجاج کیا ہے۔

ترک وزارت خارجہ کے مطابق جرمن نیوی کے جنگی فریگیٹ ہیمبرگ نے جزیرہ نما پیلوپونیسَس میں یونان کی بندرگاہ پر ترک تجارتی مال بردار جہاز روزلائن کو روک کر زبردستی تلاشی لی۔ جبکہ یہ جارحانہ واقعہ اشتعال انگیزی اور بین الالقوامی قوانین کی سنگین خلاف ورزی ہے۔

ترکی کے سرکاری ٹیلی ویژن پر اس بحری جہاز کے عملے کی  بنائی گئی ویڈیو کو بار بار نشر کیا گیا ۔ جبکہ اس ویڈیو جس میں جہاز کےعملے کے ارکان اور جرمن بحریہ کے فوجیوں کے درمیان جھگڑا ہوتے دیکھا جا سکتا ہے۔ خیال رہے کہ یہ جرمن مسلح فوجی ایک ہیلی کاپٹر کے ذریعے بلا اجازت اور زبردستی اس بحری جہاز پر اترے تھے۔

ترکی کی وزارت خارجہ کے مطابق اس مال بردار جہاز میں عمارتی پینٹ اور دیگر انسانی ضرورت کا سامان لیبیا کی بندرگاہ مصراتہ لے جایا جارہا تھا۔ ترک وزارت خارجہ نے کہا کہ یہ غیر قانونی مداخلت نہ ہی ہمارے ملک کی رضامندی سے اور نہ ہی اس جہاز کے کیپٹن کی مرضی سے کی گئی تھی۔ ترکی کے نائب صدر فواد اوکتائے نے کہا وہ اس غیر قانونی مداخلت کی سختی سے مذمت کرتے ہیں۔

ALSO READ THIS  جب ترکی فضائیہ کے ایف 16 نے آرمینی جنگی طیارہ مار گرایا
ALSO READ THIS  جب ترکی فضائیہ کے ایف 16 نے آرمینی جنگی طیارہ مار گرایا

ترکی کے مطابق  یورپی یونین اور اٹلی کے سفیروں اور جرمن سفارتخانے کے انچارج کو انقرہ میں وزارت خارجہ کی جانب سے طلب کیا گیا ۔ اور اس غیر قانونی تلاشی پر احتجاج کرتے ہوئے سفارتی مراسلہ دیا گیا ہے۔

وزیر خارجہ میولود چاوش اولو نے ترک بحری جہاز سے متعلق اس جارحانہ اقدام کے بارے بیان میں کہا ہے کہ وہ یقینی طور پر فیلڈ میں بھی اس کا جواب دیں گے اور اس غیر قانونیت کے بارے قانونی و سیاسی مرحلے کو بھی جاری رکھیں گے۔

دوسری جانب یورپی یونین کی کمانڈ آپریشن اور جرمن ترجمان نے کہا کہ ترکی نے جرمن فوجیوں کے بحری جہاز پر سوار ہونے پر اعتراض اٹھایا ہے ۔ جرمن ترجمان نے انتہائی غیر متوقع طور پر اس بین الاقوامی قانونی خلاف ورزی کو رد کرتے ہوئے کہا کہ ہر چیز قانون اور پروٹوکول کے مطابق کی جارہی تھی۔

یاد رہے کہ جرمنی اٹلی فرانس اور یونان کی طرف سے ترکی کیخلاف سخت گیر اور جارحانہ انداز اختیار کیا جا رہا ہے۔ جبکہ مسلم ممالک کے مبصرین کے مطابق ترک بحری جہاز پر یہ مسلح تلاشی کا واقعہ ایک ابھرتی ہوئی مسلم طاقت کیخلاف مغربی ممالک کی باقاعددہ کمپین کا حصہ ہے ۔

۔

ترکی کیخلاف امریکہ اور مغرب کی جارحانہ پالیسی کے بارے یہ بھی پڑھیں

آذربائیجان سے بحیرہ روم تک کشمیر اور فلسطین کا حامی ترکی عالمی ٹارگٹ ہے

تازہ ترین کالم

احتجاج کا گورکھ دہندہ ! کیا جمہوری نظام میں پاکستان کی بقا ہے ؟

احتجاج ایک آرٹ ہے اور یہ آرٹ جمہوریت کی ناجائز اولاد...

قائد اعظم نیویارک اور موٹر وے۔ ڈاکٹر شکیل الرحمٰن فاروقی

اپنا اپنا انداز ہوتا ہے کہنے کا ورنہ ستمبر کی گیارہ...

رنگ میں بھنگ ۔ ڈاکٹر شکیل الرحمٰن فاروقی

وفاقی وزیرِ سائنس اور ٹیکنالوجی کے مطابق ایک اہم سنگِ میل...

Comments

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here
ALSO READ THIS  چین کے ساتھ اب ترکی بھی پاکستان کا ہم خیال اور حلیف بن رہا ہے

چین نیوز

چین نے ہندوستان کیخلاف ڈیموں کے واٹر بم کی دھمکی دے دی

لداخ سیکٹر میں ہندوستان کو فوجی محاذ پر بدترین...

چین نے ہندوستان کیخلاف ہولناک مائیکرو ویو ہتھیار استعمال کیے

چین کی رینمن یونیورسٹی کے انٹرنشنل ریلیشن کے وائس...

ترکی نیوز