آؤ ہم سب سچ لکھیں - اور دلیل سے بات کریں

احتجاج کا گورکھ دہندہ ! کیا جمہوری نظام میں پاکستان کی بقا ہے ؟

اس بار احتجاج کے ڈیزائن میں ظالم کا کردار عمران خان اور اس کے نااہل حکومتی کارندوں کے حصے میں آیا ہے۔ ان ظالموں نے عوام سے جینے کا حق چھین لیا ہے اور حکومتی نااہلی کا نیا ریکارڈ بھی قائم کیا ہے

- Advertisement -
احتجاج ایک آرٹ ہے اور یہ آرٹ جمہوریت کی ناجائز اولاد ہے۔ اس آرٹ کی سب سے خوبصورت بات یہ ہے کہ ظالم کو خود پیدا کیا جاتا ہے۔ احتجاج کاایک فائدہ یہ بھی ہے کہ ظالم اور احتجاجی طاقتوں کو بہت بہت مالی فوائد بھی حاصل ہوتے ہیں اور مظلوم کی صرف جذباتی تسکین۔ دور نبوی ﷺ کی پورے ریاستی معاملات، سیاسی، علمی و عملی زندگی میں کہیں بھی احتجاج کا ڈیزائن نظر نہیں آتا، صرف جْہد اور جہاد۔
 
کیا قرآنی تعلیمات اور احادیث میں کوئی ایسا پیٹرن ؟؟؟ یا گائیڈ لائن؟؟۔۔۔ انتہائی غورو فکر کے بعد ایک سوال کا جواب نہیں ملتا کہ پاکستان کی مذہبی اور سیاسی جماعتوں کی تنظیم فعالیت کی فارمیشن کس سوچ کے تحت بنائی گئی؟؟؟ کم عقلی ؟؟؟ … مافیاز ؟؟؟ ودیگر ؟؟؟
 
مذہبی جماعتوں میں جماعت اسلامی احتجاج اور فنڈریزنگ میں اپنا ثانی نہیں رکھتی۔ پرتشدد احتجاج اور پرو اسٹیبلشمنٹ احتجاج میں بھی جماعت اسلامی کو عبور حاصل ہے اسلامی جمعیت طلبہ میں تو نعروں سے جذبات ابھار کر وجد پیدا کرکے احتجاجی ریلیوں کو چار چاند لگایا جاتا تھا ،دیگر مذہبی مکاتیب فکر احتجاج اور احتجاجی تحریک چلانے میں مہارت رکھتے ہیں۔
۔
۔
شیعہ سنی معاملات میں سعودی اور ایرانی بادشاہانہ کٹھ پتلی وار بھی پاکستان میں لڑی گئی، اس کی سمجھ ہمارے شیوخ اور علامہ حضرات کو کیوں نہیں آئی؟؟؟ تبلیغی جلسوں اور دروس کو بھی ایسے ہی ڈیزائن کیا گیا کہ مومن کی بجائے جذباتی اور احتجاجی مسلمان بنتے رہیں۔ عقل جس کو مالک کائنات نے پیدا کرکے فخر محسوس کیا ،اس عقل کے استعمال پر سیاسی اور مذہبی قائدین پر جمہوری پابندی عائد ہے؟؟؟
 

جمہوری مافیاز بہت حد تک ریوینیو احتجاج سے جنریٹ کرتے ہیں، بریانی اور قیمہ والے نان تو عوام کو مل ہی جاتے ہیں۔ پاکستان نے بھی کیا عمدہ قسمت پائی ہے۔ یہاں احتجاج ہو، قتل و غارت یا حکومتی تبدیلی، اس کے نوے فیصد تانے بانے بیرونی آقائوں کی طرف جاتے ہیں۔

 
امریکہ بطور سپرپاور اپنے بہت سے مفادات پاکستان میں سعودی بادشاہت کے زیراہتمام مذہبی لابیوں سے پورے کرواتا رہا۔ کبھی جہاد اور کبھی بین المذاہب اور اس طرح دیگر لابیز بھی …… اب باری آئی چائنہ کے سپر پاور بننے کی میرے مشاہدے کے مطابق چائنہ کو بھی کسی آرٹسٹ نے یہ گْر بتایا ہو گا کہ دیرپاء سپر پاور اور پاکستان میں اپنے مفادات کے کامیابی کیلئے معامشی پالیسیوں کیلئے ساتھ مذہب کارڈ کا مناسب استعمال ضروری ہے۔
 
ایسا بھی ممکن ہے اگرمختلف مکاتیب فکر انجانے میں سعودیہ اور امریکہ تحفظات کیلئے اپنی خدمات سرانجام دیں تو ایرانی تحفظات کی یقین دہانی سے پاکستان میں شیعہ فرقہ کو چائنہ اپنی پراکسی کے طور پر استعمال کرنے کی کوشش کرے گا؟ اس وقت پاکستان میں حرمت اہل بیت اور حرمت صحابہ کی لفظی گولہ باری، جلسے جلوس، سیمینارز کے پیچھے کسی آرٹسٹ کا ڈیزائن کیا ہوا سکرپٹ تو نہیں۔؟؟؟
 
گوجرانوالہ میں 12 اکتوبر کی مذہبی ریلی اور 16 اکتوبر کا سیاسی جماعتوں کا اجتماع… کون ایسا جمہوری بچہ جمورہ ہے جو اسٹیبلشمنٹ کی روحانی حاضری کے بناء قدم بھی اٹھا سکے؟؟؟ کیا ایسا تو نہیں کہ سعودی بادشاہت اپنے اقتدار کے لئے امریکی بلاک میں رہتے ہوئے چائنہ بلاک کا راستہ روکنے کیلئے اپنی چیک بکس کے منہ کھول کر پاکستان میں مذہبی اور سیاسی ریلیوں کے ذریعے نواز شریف کو اقتدار میں لاکر اپنے ایجنڈے کی تکمیل کرے؟؟؟
 
دوسری طرف چائنہ اپنے بلاک اور سپرپاور بننے کیلئے پاکستان میں اپنے مفادات کی تکمیل کیلئے عمران خان حکومت کو اپنی بقاء تصور کرے؟؟؟ کیا ایسابھی ممکن نہیں؟؟… چپکے سے اللہ کے مومن بندے جو اللہ کے نور سے رہنمائی لیتے ہوں اورکوئی نیا سسٹم معرض وجود میں لا رہے ہوں؟؟
۔
یہ سب سیاسی مہرے اقتدار کی ہوس میں ایسے گتھم گتھا ہوں کہ یہ غلیظ سسٹم ہی لپیٹ دیا جائے۔؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟
 
اس بار ایک بات عیاں ہے کہ احتجاج کے ڈیزائن میں ظالم کا کردار عمران خان اور اس کے نااہل حکومتی کارندوں کے حصے میں آیا ہے۔ ان ظالموں نے عوام سے جینے کا حق چھین لیا ہے اور حکومتی نااہلی کا نیا ریکارڈ بھی قائم کیا ہے۔ شائد اس نااہلی کی وجہ سے ہی پاکستانی عوام کو اس ظالم جمہوری نظام سے نجات ملے گی۔
 
اقتدار کی ہوس کے سیاسی اور مذہبی پْجاریو!!! ۔ ۔ 
آسماں والے نے زمین کے فیصلے تم سے چھین لئے ہیں۔
تمہاری داستاں تک بھی نہ ہو گی داستانوں میں (انشاء اللہ)۔
۔
تحریر : مرزا زاہد فاروق
ایڈیٹر روزنامہ مدبر
- Advertisement -

تازہ ترین خبریں

Comments

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

تازہ ترین