خبر اور تجزیہ

ایرانی ایٹمی سائینس دان کا قتل اسرائیلی امن دشمن کاروائیوں کا تسلسل ہے

ایران حکومت کی ترجمان اسلامی انقلابی گارڈ کور کے ترجمان کے مطابق ایرانی جوہری سائنسدان محسن فخری زادے مہابدی تہران کے آبسارڈ شہر میں ایک ٹارگٹ کلنگ حملے میں ہلاک ہو گئے ہیں

ایران کے ایٹمی پروگرام کے مرکزی کرداراہم ایٹمی سائینس دان محسن فخری زادہ تہران میں قتل کر دیے گئے ہیں ۔ یاد رہے کہ یہ ایران کے ان سرکردہ ایٹمی اور میزائیل ٹیکنالوجی سائینسدان ہیں جن کی ایران کے ایٹمی پروگرام کیلئے خدمات کا ذکر اسرائیل کے وزیر اعظم نیتن یاہو اور امریکی لیڈرز اپنی پریس کانفرنسوں میں کرتے رہے ہیں۔
 

ایران حکومت کی ترجمان اسلامی انقلابی گارڈ کور کے ترجمان کے مطابق ایرانی جوہری سائنسدان محسن فخری زادے مہابدی تہران کے آبسارڈ شہر میں ایک ٹارگٹ کلنگ حملے میں ہلاک ہو گئے ہیں۔ ان کی کار پر بموں سے حملہ کیا گیا جس کے بعد مشین گنوں سے فائرنگ کی گئی ۔

اس سے قبل بغیر نام کے یہ اطلاعات گردش کر رہی تھیں کہ تہران میں ایک ایرانی ایٹمی سائنسدان کا قتل کیا گیا ہے۔ جبکہ مابعد اطلاعات میں بتایا گیا ہے کہ اس قاتلانہ حملے میں مرنے والے ایرانی جوہری پروگرام کے ” فادر” کہلانے والے عالمی شہرت یافتہ ایٹمی سائنسدان محسن فخری زادے ہیں۔
 
ایرانی خبر رساں ایجنسیوں کے مطابق تینوں حملہ آور سیکورٹی فورسز سے مقابلے میں ہلاک ہو گئے۔ جبکہ اس سے پہلے کچھ مغربی اور اسرائیلی ویب سائٹ محسن فخری زادہ کی خود کشی کی خبریں نشر کرتے رہے۔ ایرانی جوہری پروگرام کے بانی محسن فخری زادے امام حسین یونیورسٹی میں فزکس کے پروفیسر تھے۔ محسن فخری زادے فاردر آف ایران نیوکلیئر کے نام سے مشہور تھے۔ وہ ایران کی وزارت دفاع کی ریسرچ اینڈ انوویشن تنظیم کے سربراہ بھی تھے
ALSO READ THIS  چین نے ہندوستان کیخلاف ہولناک مائیکرو ویو ہتھیار استعمال کیے

ایران کی خبر رساں ایجنسیوں کے مطابق مئی 2018 میں اسرائیلی وزیراعظم بیتن ہایو نے ایرانی ایٹمی پروگرام کے حوالے سے محسن فخری کا خاص طور پر ذکر کیا تھا۔ یاد رہے کہ 2010ء سے 2012ء تک چار ایرانی ایٹمی سائنسدانوں کو قتل کیا گیا تھا۔

ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف نے کہا کہ یہ قتل ایک ٹارگٹ کلنگ اور منصوبہ بند دہشت گردی ہے، ان کے مطابق محسن فخری زادے کے قتل میں اسرائیل کے ملوث ہونے کے اشارے موجود ہیں۔ دوسری جانب امریکی پیٹاگون نے ایرانی ایٹمی سائنسدان کے اس قتل کے حوالے سے کوئی تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے۔ جبکہ اسرائیل کی جانب سے بھی ابھی تک کوئی بیان سامنے نہیں آیا۔
 
عالمی مبصرین کے مطابق ایران نے اپنے پہلے قتل ہونے والے سائینس دانوں کے قتلوں سے کوئی سبق نہیں سیکھا۔ موجودہ صورت حال میں ایران کو اپنے جوہری سائنسدانوں اور انجینئروں کی جسمانی حفاظت کیلئے مناسب اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ ایرانی حکومت جانتی ہے کہ انہیں ہمیشہ اسرائیل کی طرف سے سنگین خطرات درپیش رہے ہیں۔ اس حوالے سے ایرانی تجزیہ نگاروں کا بھی کہنا ہے کہ تمام نیوکلیئر سائنس دان انجینئر کو رہائش، محفوظ سفری سہولیات اور قریبی نگرانی کی اشد ضرورت ہے۔
 
ایران ہمیشہ کی طرح اس وقت بھی کافی حد تک گرم ہوا سے بھرا ہوا ہے۔ ایران ہمسایہ ممالک میں پراکسی وار کے ذریعے جنگی مہم جوئیاں تو کر سکتا ہے۔ لیکن اس کے پاس معنی خیز چیزوں کو نشانہ بنانے یا ان کا بھرپور جواب دینے کی صلاحیت نہیں ہے۔ یہ افسوس ناک امر ہے کہ ایران کا کمزور اندرونی ڈیفنس سسٹم اپنی انتہائی اہم شخصیتوں کی حفاظت کرنے میں بھ ناکام ٹھہرا ہے

یہ امر حیران کن اور ایرنی دفاعی صلاحیت کے حوالے سے اہم سوالیہ نشان ہے کہ اسرائیلی ایجنسیاں ایران کے اندر کس حد تک آزادانہ کاروائیاں کرسکتی ہیں۔  یہ سب کچھ کچھ ایران کی دفاعی اور سٹریٹجک صلاحیتوں کی کمزوریوں کو بینقاب کرتی ہوئی زندہ حقیقت ہے

 

ALSO READ THIS  چین کے ساتھ اب ترکی بھی پاکستان کا ہم خیال اور حلیف بن رہا ہے

تازہ ترین کالم

احتجاج کا گورکھ دہندہ ! کیا جمہوری نظام میں پاکستان کی بقا ہے ؟

احتجاج ایک آرٹ ہے اور یہ آرٹ جمہوریت کی ناجائز اولاد...

قائد اعظم نیویارک اور موٹر وے۔ ڈاکٹر شکیل الرحمٰن فاروقی

اپنا اپنا انداز ہوتا ہے کہنے کا ورنہ ستمبر کی گیارہ...

رنگ میں بھنگ ۔ ڈاکٹر شکیل الرحمٰن فاروقی

وفاقی وزیرِ سائنس اور ٹیکنالوجی کے مطابق ایک اہم سنگِ میل...

Comments

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

چین نیوز

چین نے ہندوستان کیخلاف ڈیموں کے واٹر بم کی دھمکی دے دی

لداخ سیکٹر میں ہندوستان کو فوجی محاذ پر بدترین...

چین نے ہندوستان کیخلاف ہولناک مائیکرو ویو ہتھیار استعمال کیے

چین کی رینمن یونیورسٹی کے انٹرنشنل ریلیشن کے وائس...

ترکی نیوز