خبر اور تجزیہ

چین سے ذلت آمیز شکست کے بعد بھارت کی پاکستان کیخلاف جھوٹی الزام تراشیاں شروع

بھارت نے پاکستانی ہائی کمیشن میں تعینات سفارتی عملے کی تعداد نصف کرنے کے بعد آدھے عملے کو سات دن کے اندر بھارت چھوڑنے کا حکم دیا ہے

- Advertisement -
بھارت سمیت پورے خطے میں عوام الناس کورونا کے شدید بحران سے عاجز ہے، انسانیت امن کی متلاشی ہے مگر لداخ میں چین کے ہاتھوں ذلت آمیز شکست کے بعد بھارتی میڈیا اور عوام کی طرف سے کڑی تنقید اور کشمیر میں اپنے مظالم سےبھا توجہ ہٹانے کیلئے بھارت نے پاکستان کیخلاف من گھڑت الزامات کا سلسلہ تیز کر دیا ہے۔ نئی دہلی میں پاکستانی ہائی کمیشن میں تعینات سفارتی عملے کی تعداد نصف کرنے کے بعد آدھے عملے کو سات دن کے اندر بھارت چھوڑنے کا حکم دیا ہے۔
 
بھارت نے اس کے ساتھ ساتھ پاکستان میں اپنے سفارتی عملے کی تعداد آدھی کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس بارے نئی دہلی میں پاکستانی ہائی کمیشن کے ناظم الامور کو بھارتی وزارتِ خارجہ میں طلب کرنے کے بعد جاری کردہ بیان میں کیا گیا۔ جبکہ پاکستان کے دفتر خارجہ نے بھارت کی طرف سے پاکستان پر عائد کیے گئے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے شدید مذمت کی ہے۔ پاکستانی دفتر خارجہ کے مطابق بھارتی الزامات نئی دہلی میں تعینات پاکستانی سفارتی عملے کی تعداد نصف کرنے کا ایک بہانہ ہے۔
 
بھارتی وزارتِ خارجہ کے مطابق پاکستان ہائی کمیشن کے بعض اہل کاروں کی بھارت میں جاسوسی کی سرگرمیاں اور دہشت گرد تنظیموں سے تعلقات تھے۔ اس بارے جنہیں بارہا تنبیہ بھی کی گئی۔ بھارتی حکام نے الزام لگایا ہے کہ 31 مئی کو دو اہل کاوں کو رنگے ہاتھوں پکڑ کر ملک بدر کیا گیا تھا۔ جبکہ پاکستانی حکام نے ان الزامات کی سختی سے تردید کی ہے
 
بھارت نے یہ من گھڑت الزام لگایا ہے کہ پاکستانی اہل کار جاسوسی میں ملوث پائے گئے۔ جبکہ ان کیخلاف بھارتی اقدامات کے بعد پاکستان میں بھارتی عملے کو ہراساں کیا گیا۔ اور انہیں گن پوائنٹ پر اغوا کر کے ناروا سلوک کیا گیا۔ جبکہ ہاکستان کے مطابق بھارتی اہل کاروں کو اسلام آباد میں کار کی ٹکر سے ایک شخص کو زخمی کرنے کے الزام میں پولیس نے گرفتار کیا تھا۔ لیکن مابعد ان دونوں اہل کاروں کو واہگہ بارڈر کے راستے بھارت روانہ کر دیا گیا تھا ۔
 
پاکستانی دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ بھارت میں پاکستانی ہائی کمیشن کے افیسروں کیخلاف الزامات کو پاکستان مکمل مسترد کرتا ہے۔ پاکستان کے مطابق ان کے اہلکار ہمیشہ بین الاقوامی قوانین اور سفارتی اصولوں کے تحت کام کرتے ہیں۔
 
پاکستانی دفتر خارجہ کے مطابق بھارت کا پاکستان کیخلاف الزامات سے بھارتی ہائی کمیشن کے اہلکاروں کے مبینہ غیر قانونی اقدامات کو چھپایا نہیں جا سکتا۔ پاکستان پر جھوٹے الزامات دراصل مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے توجہ ہٹانے کی کوشش ہے۔
 
دفتر خارجہ کے مطابق پاکستان عالمی برداری کو مودی سرکار کی ان غیر ذمہ دارانہ پالیسوں کے بارے میں آگاہ کرتا آ رہا ہے جو علاقائی امن و سلامتی کو خطرے سے دوچار کر رہی ہیں۔
 
- Advertisement -

تازہ ترین خبریں

Comments

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

تازہ ترین